کورین حکومت، بڑھتی عمر سے پیدا ہونے والے مسائل کا حل

migration-3129340_960_720

جنوبی کورین حکومت کی جانب سے شرح پیدائش کے کم ہونے اور عمر رسید آبادی کے زیادہ ہونے کے رد عمل کے طور پر ہنرمند غیر ملکیوں کو افرادی قوت کے طور پر کوریا بلانے کا اعلان کیا گیا ہے

١٨ ستمبرکو، وزارت حکمت عملی و خزانہ نے اقتصادی قوت کے حوالے سے ایک اجلاس میں آبادی کے ڈھانچے میں رونما ہونے والی تبدیلیوں سے نمٹنے کیلئے ممکن اقدامات پر تبادلہ خیال کے بعد اس منصوبے کو حتمی شکل دے دی

اس منصوبے کے تحت اعلی تعلیم یافتہ اور اچھی اجرت والے غیر ملکیوں کو کوریا کی جانب راغب کرنے کیلئے ‘ایکسلینٹ ٹیلنٹ ویزا’ متعارف کروایا جائے گا. یہ ویزا حاصل کرنے والے غیر ملکیوں کو طویل عرصے تک قیام، فیملی ویزا اور ورک پرمٹ جیسے منفرد فوائد حاصل ہوں گے

درمیانی مدت سے طویل مدت تک، اس پروگرام کے تحت باصلاحیت و ہنرمند غیر ملکیوں کے روزگار سے لے کر بچوں کی تعلیم کے امور تک مرضی کے مطابق درکار خدمات مہیا کی جائیں گی۔ امیگریشن، روزگار اور طبی خدمات سے متعلقہ ہر وقت مشاورت کی دستیابی کے علاوہ، حکومت پرائمری اسکولوں میں کورین کلاسوں کی تعداد میں اضافہ کے ذریعے غیر ملکی بچوں کے لئے تعلیمعی مقصد میں بھی مدد فراہم کی جائے گی

گنجان آباد صوبوں کی آبادی کو بڑھانے کے لئے حکومت کی جانب سے مخصوص علاقوں میں واقع کالجوں میں تعلیم حاصل کرنے والے طلباء و طالبات کو ایک مخصوص مدت کے لئے چھوٹے شہروں میں رہنے پر مستقل رہائش حاصل کرنے والوں کو اضافی پوائنٹس دیے جائیں گے

اب تک، کورین قوانین کی خلاف ورزی کرنے کی صورت میں کوریا میں قیام کی اجازت نہیں دی جاتی تھی، لیکن اب اگر کوریا زندگی کی بنیاد موجود ہونے کی صورت میں ملک بدر کرنے کی بجائے قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے غیر ملکیوں سے نظم و ضبط برقرار رکھنے کے زمرے میں رقم وصول کی جائے گی اور  قیام میں توسیع کی اجازت دے دی جائے گی۔ نظم و ضبط کی بحالی کے زمرے میں جمع ہونے والی رقوم کو غیر ملکیوں کے معاشرتی انضمام اور مستقبل میں غیر ملکیوں کے کوریا میں بقا اور سماجی فلاح جیسی پالیسیوں کے لئے استعمال کیا جائے گا

اس طرح کی تبدیلی کے لئے حکومت کی جانب سے اتحاد سے متعلقہ قوانین کو ختم کرکے “یونائیٹڈ امیگریشن کنٹرول قوانین” کے نظام کو قائم کرنے کے ارادے کا اظہار کیا گیا ہے

ہنر مند غیر ملکیوں کو کوریا میں مسلسل قیام کیلئے مدد فراہم کرنے کے لئے، حکومت “ٹیلنٹڈ فنکشن اسکور سسٹم” کی حدود کو نمایاں طور پر وسیع کیا جائے گا، جس کی مدد سے باآسانی طویل مدتی ویزا حاصل کیا جا سکے گا. پانچ سال سے زیادہ عرصہ تک کوریا میں کام کرنے اور کورین زبان کے حوالے سے درکار مہارت کے حامل ہونے کی صورت میں ویزا تبدیل کرنا ممکن ہے

اس کے علاوہ ایسے لوگ جو اب بھی کوریا میں کام کر رہے ہیں، حکومت کی جانب سے “مخلص ری انٹری” کے نظام پر بھی غور کرنے کا ارادہ ظاہر کیا گیا ہے، جو غیر ملکیوں کو کوریا چھوڑنے کے بعد دوبارہ کوریا میں داخل ہونے کی اجازت دیتا ہے  اور پھر سے داخلے پر پابندی کی مدت کو بھی ٣ ماہ تک مختصر کیا جائے گا

<한국 정부, 고령화 문제 이주민 유입으로 해결>

한국 정부가 저출산·고령화에 따른 생산연령인구 감소 현상 대응 차원으로 우수 외국 인력을 받아들이기 위한 정책을 발표했다.

9월 18일 기획재정부(Ministry of Economy and Finance)는 경제활력대책회의에서 이런 내용을 골자로 한 ‘인구구조 변화 대응 방안’을 논의한 뒤 확정했다.

‘우수인재 비자’를 신설해 고학력·고임금 외국인 인재를 유치한다. 이 비자를 발급받으면 장기체류나 가족동반, 취업 허용 등 다양한 혜택이 주어진다.

중장기적으로는 우수 외국인의 고용부터 자녀교육 문제까지 맞춤형 서비스를 제공한다. 출입국·고용·의료 실시간 상담은 물론, 초등학교 내 한국어 학급 수를 늘려 외국인 자녀 교육도 지원한다.

점점 줄어드는 지방 인구를 늘리기 위해 인구과소 지역에 기능대학 유학생이나 제조업체 숙련기능공이 일정 기간 머무를 경우 장기체류를 허용하고, 영주권 등을 획득할 때도 가점을 준다.

그간 이주민이 법을 위반하면 체류 연장 허가를 내주지 않았지만, 국내에 생활기반이 있다면 질서유지부담금을 부과하고 체류는 연장해줄 방침이다. 질서유지부담금으로 조성한 재원은 향후 외국인 체류 관리 비용, 외국인 사회통합 지원 정책 등에 활용할 예정이다. 

이 같은 변화를 위해 관련 법령도 일제히 손질해 ‘통합적 이민관리법’ 체계를 구축하겠다는 것이 정부의 구상이다. 

아울러 숙련 외국인력을 한국에 머물도록 하기 위해 비전문취업·방문취업 비자로 입국했더라도 국내에서 5년 이상 일하고 한국어 능력이나 자격증 소지 등의 요건을 충족한다면 장기체류 비자로 전환해주는 ‘숙련기능점수제’를 대폭 확대할 예정이다. 

근속 외국인에 대해서는 출국 뒤 재입국을 허용하는 ‘성실 재입국’ 제도의 장벽을 낮추고, 재입국 제한 기간도 현행 3개월보다 단축할 계획이다.

 

답글 남기기

아래 항목을 채우거나 오른쪽 아이콘 중 하나를 클릭하여 로그 인 하세요:

WordPress.com 로고

WordPress.com의 계정을 사용하여 댓글을 남깁니다. 로그아웃 /  변경 )

Google photo

Google의 계정을 사용하여 댓글을 남깁니다. 로그아웃 /  변경 )

Twitter 사진

Twitter의 계정을 사용하여 댓글을 남깁니다. 로그아웃 /  변경 )

Facebook 사진

Facebook의 계정을 사용하여 댓글을 남깁니다. 로그아웃 /  변경 )

%s에 연결하는 중